بندہ کیا کرے؟

وَصل میں بھی گر سکوں نہ ملے تو بندہ کیا کرے

جذبات میں بھی گر جنوں نہ ملے تو بندہ کیا کرے

شراب میں بھی گر سرور نہ ملے تو بندہ کیا کرے

بنا حُسن و جَمال کے کوئی مغرور ہو تو بندہ کیا کرے

عِشق میں بھی گر فطور نہ ہو تو بندہ کیا کرے

سانس بھی گر دھڑکن سے دور ہو تو بندہ کیا کرے

قازی ہو کر بھی کوئی بے شعور ہو تو بندہ کیا کرے

بازو ہوکر بھی گر کوئی مفلوج ہو تو بندہ کیا کرے

سجدے میں سر رکھ کے بھی گر اُس سے دور ہو تو بندہ کیا کرے

بتاوں مجھے ! زہر کھا کے بھی گر جینا ضرور ہو تو بندہ کیا کرے؟